ہم نے الیکشن کمیشن کو با اختیار بنایا ہے، تحریک لبیک پر پابندی حکومت پاکستان کی ہدایت پر وزارت داخلہ نے لگائی ، وزیر اعظم راجہ فاروق حیدر
No image مظفرآباد( 15 جون2021)وزیر اعظم آزاد جموں و کشمیر راجہ محمد فاروق حیدر خان نے کہا ہے کہ آزادی اظہار کی آڑ میں کسی کی مذہبی عقائد کو نشانہ بنانا انتہائی شرمناک ہے، سوشل میڈیا پر اورمغربی ممالک کی جانب سے اسلامی شعار، اسلامی تہذیب اور ناموس رسالتﷺ کے حوالے سے منفی اور متعصبانہ طرز عمل اپنانے کی شدید مذمت کرتا ہوں۔کشمیر اور فلسطین کے مظالم کو محض تجارتی مفادات کی بناء پر نظر انداز کرنا انتہائی شرمناک اور انتہاء پسندی کا عمل ہے۔عقیدہ ختم نبوتؐ پر ہمارا کامل ایمان ہے اور اس ایوان کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ ہم نے قانون سازی کے ذریعے قادیانیوں کو غیر مسلم قراردیا۔تحریک لبیک پر پابندی نیشنل ایکشن پلان کے تحت حکومت پاکستان کی ہدایت پر وزارت داخلہ نے لگائی ہے، جس پر حکومت آزادکشمیر عملدرآمد کی پابند ہے۔ سابق ممبر اسمبلی سردار صغیر خان چغتائی کی حادثے میں وفات پرانتہائی دکھ ہوا ہے، اللہ رب العزت ان کی منزلیں آسان کرے، مرحوم انتہائی متحرک سیاسی کارکن تھے اور ہر وقت اپنے حلقہ انتخاب کے لوگوں کی خدمت میں لگے رہتے تھے۔ وہ انتہائی با اصول انسان تھے ان کی حادثاتی موت کی وجہ پنجاب کے حدود میں انتہائی خراب سڑک بنی،سڑک کی متبادل تعمیر انتہائی نا گزیر ہے جس کیلئے میں نے حکومت پاکستان کو تجویز بھی دی تھی۔ منگل کے روز قانون ساز اسمبلی سے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ حادثہ پنجاب کی حدود میں پیش آیا جبکہ حکومت آزاد کشمیر اور پاک فوج نے بروقت ریسکیو آپریشن کیا،یہ ہماری ذمہ داری بنتی تھی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ممبر اسمبلی کی حادثاتی موت کے حوالے سے سوشل میڈیا پر شکوک و شبہات کا اظہار کرنے سے گریز کیا جائے اور حادثے کی کریمنیل انوسٹی گیشن کا اختیار حکومت پنجاب کے پاس ہے تاہم لواحقین کی درخواست پر حکومت آزاد کشمیر ہر ممکن تعاون فراہم کرے گی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ہم نے الیکشن کمیشن کو با اختیار بنایا ہے، الیکشن کمیشن کا کردار محض عام انتخابات تک محدود نہیں ہے بلکہ یہ تسلسل کے ساتھ اپنا کام جاری رکھے گا، چاہے ضمنی انتخابات ہوں یہ بلدیاتی انتخابات الیکشن کمیشن کو مکمل فعال بنا دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اے ڈی پی میں شامل ہونے والے منصوبہ جات کو کسی صورت ملتوی نہیں کیا جا سکتا اس طرح بجٹ لیپس ہونے کے خدشات پیش آئیں گے اور بجٹ پاس کرنا مشکل ہو جائے گا۔انہوں نے کہا کہ فیس بک اور ٹویٹر پر فلسطین اور کشمیر کے مظالم کے حوالے سے اشاعت کو روکنا انتہائی افسوسناک ہے۔

اجلاس کے آغاز میں ممبر اسمبلی صغیر چغتائی،ممبر اسمبلی حسن ابراہیم کی والدہ، وزیر تعلیم بیرسٹر افتخار گیلانی کے والد اور گزشتہ روز کوئٹہ میں شہید ہونے والے افراد کے ایصال ثواب کیلئے فاتحہ خوانی کی گئی اور ان کی بلندی درجات کیلئے دعا کی گئی۔ سپیکر شاہ غلام قادر نے ممبران اسمبلی سحرش قمر،فائزہ امتیاز اور شازیہ اکبر پر مشتملپینل آف چئیرمین کا اعلان کیا۔ اجلاس میں وزیر قانون و پارلیمانی امور سردار فاروق احمد طاہر نے مسودات قانون The Azad Jammu and Kashmir Ministers (Salaries, Allowances and Privileges) (Amendment) Ordinance, 2021. اور The Arbitration (Amendment) Act, 2021. اور The Azad Jammu and Kashmir Information Technology Board (Amendment) Act, 2018.
پیش کئے جو ایوان نے اتفاق رائے سے منظورکر لیے۔ سپیکر اسمبلی نے آزادجموں وکشمیرالیکشنز ایکٹ2020ء کی دفعہ14ذیلی دفعہ(1)کی روشنی میں آزادجموں وکشمیر الیکشن کمیشن کی سالانہ رپورٹ بابت سال2020ء ایوان میں پیش کی۔
اجلاس میں ممبر اسمبلی عبدالرشید ترابی کی جانب سے پیش کی گئی دو قراردادیں ایوان نے اتفاق رائے سے منظور کر لیں۔ ممبر اسمبلی عبدالرشید ترابی کی جانب سے پیش کی گئی قرارداد میں کہا گیا کہآزادجموں وکشمیر قانون سازاسمبلی کا یہ اجلاس کشمیر اور فلسطین کے حوالے سے فیس بک انتظامیہ کے متعصبانہ رویے کی شدید مذمت کرتا ہے جس کے نتیجہ میں کشمیر اور فلسطین میں ہونے والے مظالم کو اجاگر کرنے والے فیس بک اکاؤنٹس کو بلاک کردیا جاتا ہے۔یوں بھارتی اوراسرائیلی ریاستی دہشت گردی کی حوصلہ افزائی کی جاتی ہے۔ اجلاس اس امر پر بھی تشویش کا اظہار کرتا ہے کہ سوشل میڈیا کے یہ گروپس اسلامی شعار، اسلامی تہذیب اور ناموس رسالتﷺ کے حوالے سے منفی اور متعصبانہ طرز عمل اختیار کیئے ہوئے ہیں۔ اجلاس حکومت پاکستان سے مطالبہ کرتا ہے کہ اعلیٰ سطح پر فیس بک انتظامیہ سے احتجاج کرتے ہوئے اصلاح احوال کے لئے اپنا کردارا ادا کرے ورنہ ایسے متعصبانہ گروپس پر سرکاری طور پر پابند ی عائد کرنے کا اہتمام کرے۔
ممبر اسمبلی عبدالرشید ترابی کی جانب سے پیش کی گئی دوسری قرارداد میں کہا گیا کہآزادجموں وکشمیر قانون سازاسمبلی کا یہ اجلاس ممبر قانون سازاسمبلی جناب محمد صغیرخان چغتائی کی ناگہانی وفات پر دلی افسوس کا اظہار کرتے ہوئے ان کے لواحقین سے اظہار تعزیت کرتا ہے۔ مرحوم ایک شریف النفس اور عوامی خدمت کے جذبہ سے سرشار سیاسی رہنما تھے، جنہوں نے اسمبلی کے فلور اور ہر سطح پر عوام کی ترجمانی کا حق ادا کیا۔ مرحوم کی ناگہانی وفات نہ صرف ان کے حلقہ انتخاب بلکہ پوری ریاست کے لئے ایک سانحہ ہے۔ ایوان دلی طور پران کے بلندی درجات کے لئے دعاگو ہے کہ اللہ تعالیٰ ان کی ملی وعوامی خدمات قبول فرماتے ہوئے جنت الفردوس میں اعلیٰ مقام عطا فرمائے اورلواحقین اور پسماندگان اور حلقہ نیابت کے عوام کو صبر جمیل عطا فرمائے۔ اجلاس دعاگو ہے کہ ان کا اور ان کے ہمراہ حادثے کا شکار ساتھیوں کے جسد خاکی جلد از جلد برآمد ہوں تاکہ آسودہ خاک ہوسکیں۔ممبر اسمبلی عبدالرشید ترابی کی غیر موجودگی میں ممبر اسمبلی سحر قمر اور ممبر اسمبلی شازیہ اکبر نے قراردادیں ایوان میں پڑھیں۔

واپس کریں