تحریک انصاف نے الیکشن اتحاد کےمسلم کانفرنس کے دعوے کو غلط قرار دے دیا،صرف مسئلہ کشمیر پر اتفاق ہے،مرکزی سیکرٹریٹ سے جاری بیان
No image اسلام آباد(کشیر رپورٹ) وزیر اعظم عمران خان سے مسلم کانفرنس کے قائد سردار عتیق احمدخان کی ملاقات کے بعد تحریک انصاف کے مرکزی سیکرٹریٹ سے جاری ایک بیان میں مسلم کانفرنس کی طرف سے جاری بیان کی تردید کی گئی ہے۔ تحریک انصاف کے مرکزی سیکرٹریٹ سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ
''اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ آزاد جموں وکشمیر کی دونوں بڑی سیاسی جماعتیں( پاکستان تحریک انصاف اور مسلم کانفرنس)اپنے اپنے منشور کے مطابق قانون ساز اسمبلی کے انتخابات میں حصہ لیں گی تاہم مسئلہ کشمیر پر دونوں جماعتوں کے موقف میں مکمل ہم آہنگی اور اتفاق پایا جاتا ہے چناچہ دونوں جماعتیں مل کر کشمیر کے مسئلے کو اجاگر کرنے کی کوششیں جاری رکھیں گے''۔
جبکہ اس ملاقات کے بعد مسلم کانفرنس کی طرف سے جاری بیان میں کہا گیا تھا کہ
'' دونوں جماعتیں تحریک انصاف اور مسلم کانفرنس مل کر الیکشن میں حصہ لیں گی اور الیکشن کے بعد ملکر حکومت سازی پر بھی اتفاق کیا گیا''۔

الیکشن میں اتحاد قائم ہونے کی مسلم کانفرنس کی خبر سے تحریک انصاف ،جو پہلے ہی پارٹی ٹکٹوں پر بغاوت اور انتشار کا شکا ر ہے، مزید خلفشار کا شکار ہو گئی ہے۔تحریک انصاف کی طرف سے مسلم کانفرنس کے جاری کردہ تحریری بیان کو جھٹلانے سے مسلم کانفرنس کی پوزیشن پر مزید سوالیہ نشان کھڑے ہو گئے ہیں۔
واضح رہے کہ5اگست2019کو ہندوستان کی طرف سے مقبوضہ جموں وکشمیر کی خصوصی ریاستی حیثیت ختم کر کے ہندوستان میں مدغم کرنے کے اقدام کے بعد وزیر اعظم پاکستان عمران خان نے یہ کشمیر پالیسی دی ہے کہ کوئی ایسا کام نہ کیا جائے کہ جس سے ہندوستان کو آزاد کشمیر یا گلگت بلتستان میں حملہ کرنے کا بہانہ مل جائے۔انہی دنوں آنے والی اطلاعات کے مطابق پاکستان اور ہندوستان کے درمیان خفیہ ملاقاتوں کا سلسلہ گزشتہ دوسا ل سے جاری ہے یعنی مقبوضہ جموں و کشمیر سے متعلق ہندوستانی اقدام کے بعد سے، اس سے ان امکانات کوتقویت ملتی ہے کہ وزیر اعظم عمران خان حکومت کی طرف سے ہندوستان کو کشمیر کے معاملے میں سہولت کاری فراہم کی گئی ہے۔

کیا واقعی مسلم کانفرنس وزیر اعظم عمران خان حکومت کی اس کشمیر پالیسی کی حمایت کرتی ہے؟ جس کا دعوی تحریک انصاف کے مرکزی سیکرٹریٹ سے جاری اس بیان میں کیا گیا ہے؟ واضح رہے کہ مسلم کانفرنس کے قائد سردار عتیق احمد خان وزیر اعظم عمران خان حکومت کی طرف سے گلگت بلتستان کو پاکستان کا صوبہ بنانے کی کوششوں کی سخت مخالفت کرتے آ رہے ہیں۔تحریک انصاف کے مرکزی سیکرٹریٹ سے جاری اس بیان کے بعد مسلم کانفرنس کے قائد سردار عتیق احمد خان پہ ذمہ داری آ ئی ہے کہ وہ اس حوالے سے صورتحال اور اپنے لائحہ عمل کی وضاحت کریں۔
وزیر اعظم پاکستان عمران خان سے مسلم کانفرنس کے قائد سردار عتیق احمد خان اوران کے فرزند عثمان عتیق خان نے ملاقات کی۔اس موقع پر وزیر امور کشمیر علی امین گنڈا پور ،تحریک انصاف کے سیکرٹری جنرل عامر محمود کیانی اور چیف آرگنائیزر سیف اللہ نیازی بھی موجود تھے۔ مسلم کانفرنس کی طرف سے جاری بیان کے مطابق دونوں جماعتیں تحریک انصاف اور مسلم کانفرنس مل کر الیکشن میں حصہ لیں گی اور الیکشن کے بعد ملکر حکومت سازی پر بھی
اتفاق کیا گیا۔
واپس کریں