سردار عبدالقیوم نیازی آزاد کشمیر کے 13 ویں وزیرِ اعظم منتخب
No image مظفر آباد(4اگست2021) سردار عبدالقیوم نیازی آزاد کشمیر کے 13 ویں وزیرِ اعظم منتخب ہو گئے۔تحریکِ انصاف کے امیدوارسردار عبدالقیوم نیازی کو 33 ووٹ ملے ہیں، ان کے مقابل متحدہ اپوزیشن کے نامزد امیدوار چوہدری لطیف اکبر نے 15 ووٹ لیئے۔اس سے قبل نو منتخب اسپیکر چوہدری انوار الحق کی صدارت میں آزاد کشمیر قانون ساز اسمبلی کا اجلاس ہوا جس میں وزیرِ اعظم آزاد کشمیر کے انتخاب کا مرحلہ مکمل ہوا اور ان کے نام کا اعلان کیا گیا۔طے کیئے گئے طریقہ کار کے مطابق آزاد کشمیر قانون ساز اسمبلی میں ووٹنگ ہوئی، ووٹنگ مکمل ہونے کے بعد تمام اراکین ایوان سے باہر چلے گئے، پھر ووٹوں کی گنتی شروع ہوئی، گنتی مکمل ہونے پر گھنٹیاں بجائی گئیں۔پاکستان تحریکِ انصاف، پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ نون کے اراکین ایوان میں موجود تھے جنہوں نے وزیرِ اعظم آزاد کشمیر کے لیے ووٹنگ میں حصہ لیا۔اسمبلی کے سیکریٹری کے مطابق دونوں امیدواروں کے لیے الگ الگ پریزائیڈنگ آفیسر مقرر کیئے گئے تھے، عبدالقیوم نیازی کے لیے 3 جبکہ چوہدری لطیف اکبر کے لیے 4 کاغذاتِ نامزدگی موصول ہوئے تھے جنہیں درست قرار دیا گیا۔پاکستان تحریکِ انصاف (پی ٹی آئی)نے سردار عبدالقیوم نیازی کو وزیرِ اعظم آزاد کشمیر کے منصب کے لیے نامزد کیا تھا جبکہ پاکستان پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ نون نے مشترکہ طور پر چوہدری اکبر کو آزاد کشمیر کے وزیرِ اعظم کے لیے امیدوار نامزد کیا تھا۔

ووٹنگ کے طریقہ کار پر مسلم لیگ نون اور پیپلز پارٹی کے مشترکہ امیدوار چوہدری لطیف اکبر نے اعتراض کرتے ہوئے کہا تھا کہ ووٹنگ خفیہ ہونی چاہیئے، قاعدہ چہارم کو معطل کیا جائے اور خفیہ رائے شماری کی جائے۔مسلم کانفرنس کی جانب سے پی ٹی آئی کے نامزد وزیرِ اعظم عبدالقیوم نیازی کی حمایت کا اعلان کیا گیا تھا، مسلم کانفرنس کی آزاد کشمیر اسمبلی میں صرف 1 نشست ہے۔پاکستان تحریکِ انصاف 32 اراکین کے ساتھ ایوان میں سرِ فہرست ہے، وزیرِ اعظم کے انتخاب کیلئے 27 ارکان پر مشتمل سادہ اکثریت سے انتخاب عمل میں لایا گیا۔آزاد کشمیر کے وزیرِ اعظم کا انتخاب آئین کے آرٹیکل 13 کے تحت عمل میں لایا گیا۔

قائد ایوان آزاد جموں وکشمیر اسمبلی سردار عبدالقیوم خان نیازی نے منتخب ہونے کے بعد ایوان میں اظہار خیال کرتے ہوئے چیئرمین پاکستان تحریک انصاف وزیر اعظم پاکستان عمران خان،سیف اللہ نیازی، وزیر امور کشمیر علی امین گنڈا پور، صدر پی ٹی آئی آزادکشمیر بیرسٹر سلطان محمود چوہدری، سردار تنویر الیاس اور تمام ممبران اسمبلی کا شکریہ ادا کیا کہ انہوں نے مجھ پر اعتماد کیا ہے انشاء اللہ عوام کے اعتماد پر پورا اترنے کی کوشش کروں گا۔ سردار عبدالقیوم خان نیازی نے کہا کہ عمران خان کے ویژن کے تحت ریاست کی عوام کی فلاح و بہبود، ہائیڈرل، صحت، تعلیم اور مواصلات اور روڈ انفراسٹرکچر کو بہتر کرنا اولین ترجیح ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہسپتالوں کی حلات بہتر کریں گے اور لائن آف کنٹرول پر بسنے والے عوام کو تمام سہولیات کی فراہمی اولین ترجیح ہے۔قائد ایوان نے کہا کہ عمران خان کشمیریوں کے وکیل، سفیر اور محسن ہیں ان کے ویژن پر عمل کرتے ہوئے ریاست کی عوام کی فلاح وبہبود اولین ترجیح ہے۔ انہوں نے کہا کہ آزادکشمیر میں رواداری کی سیاست کو فروغ دیں گے۔ اپوزیشن کا رول اہم ہوتا ہے۔ اپوزیشن کو ساتھ لے کر چلیں گے۔ بھمبر سے لے کر تاؤ بٹ تک ہم سب ایک ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم سب نے مل کر ریاست کے عوام کی فلاح وبہبود کے لیے کام کرنا ہے۔ اس میں اپوزیشن کا کردار انتہائی اہمیت کا حامل ہے۔ عبدالقیوم نیازی نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان کشمیریوں کے وکیل ہیں۔ عمران خان کے موجودگی میں اقوام متحدہ کی قرار دادوں کے مطابق رائے شماری کے علاوہ کوئی فارمولا زیرغور نہیں اور ایسا کوئی فارمولا کشمیریوں کے لیے قابل قبول نہیں۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان نے پاکستان اور آزادکشمیر میں نچلے طبقے کو اوپر اٹھایا ہے۔ آج پاکستان اور آزاد کشمیرمیں احساس پروگرام کے تحت ہیلتھ کارڈکا بلا تخصیص اجراء اہم کارنامہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ کل یوم استحصال منا رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آزادکشمیر میں قانون کی بالا دستی کو قائم کریں گے اور تعمیر وترقی اولین ترجیح ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایوان میں خواتین کی نشستوں میں اضافہ کریں گے تاکہ ایوان میں خواتین کی نمائندگی زیادہ ہو سکے۔ انہوں نے کہا کہ آج اس منصب پر اللہ کے فضل سے پہنچا ہوں اور دعا کرتا ہوں کہ میں ریاست کی عوام کے اعتماد پر پورا اتر سکوں۔ آخر میں اجلاس غیر معینہ مدت کے لیے ملتوی کر دیا گیا۔اجلاس کے بعد صحافیوں سے گفتگو میں وزیر اعظم عبدالقیوم نیازی نے کہا کہ وہ اپوزیشن کو ساتھ لے کر چلیں گے۔

عبدالقیوم نیازی کا تعلق ضلع پونچھ حلقہ عباسپور ایل۔اے 18پونچھ ون کے گاؤں درہ شیر خان سے ہے ۔ وہ 1969 میں عباسپور کے گاؤں درہ شیر خان میں پیدا ہوئے ان کا تعلق مغل خاندان سے ہے سردار عبدالقیوم خان "نیازی "تخلص لکھتے ہیں مقامی سطح پر ان کو دلی مغل کہا جاتا ہے ۔ان کے آباؤ اجداد 1947 میں مقبوضہ کشمیر سے ہجرت کرکے ضلع پونچھ کے کنٹرول لائن پر واقع علاقہ درہ شیر خان میں آباد ہوئے ان کے بڑے بھائی جناب غلام مصطفیٰ مغل 1985 میں وزیر مال رہے ۔ جناب عبدالقیوم خان نیازی نے22 سال کی عمر میں ڈسٹرکٹ کونسلر کا الیکشن لڑا جو جیت گئے ۔ 2006 میں ممبر اسمبلی کے لئے مسلم کانفرنس کے ٹکٹ سے الیکشن لڑا اور امیدوار اسمبلی نامزد ہوئے ، 2006 سے 2011 تک وزیر خوراک سمیت دیگر وزارتوں پر بطور وزیر اپنی خدمات سر انجام دیتے رہے۔2011 میں دوبارہ مسلم کانفرنس کے ٹکٹ سے امیدوار اسمبلی کے لئے الیکشن لڑا جس میں ناکام ہوئے۔2016 میں ایک بار پھر مسلم کانفرنس کے ٹکٹ سے امیدوار اسمبلی کے لئے میدان میں اترے اور چند سو ووٹوں سے الیکشن ہار گئے ، بعد ازاں الیکشن میں دھاندلی کا الزام لے کر عدالت پہنچے جس کا کیس عام انتخابات 2021 تک عدالت میں تھا۔2019 میں مسلم کانفرنس کی دیرینہ رکنیت کو خیر آباد کہہ کر پاکستان تحریک انصاف میں شامل ہوئے اور عام انتحابات 2021 پاکستان تحریک انصاف کے ٹکٹ سے الیکشن لڑا اور 9 ہزار کی لیڈ کے ساتھ 24758 ووٹ حاصل کئے ۔
واپس کریں