ہندوستانی فوجیوں نے گیلانی صاحب کے جسد خاکی کو زمین پر گرا کر گھسیٹا، ہندوستان کا کشمیریوں کے خلاف غیر انسانی، مکروہ چہرہ
No image سرینگر( کشیر رپورٹ)مقبوضہ کشمیر میںہندوستان کے غیر انسانی چہرے کی مزید ایک مثال اس وقت دیکھنے میں آئی جب ہندوستانی فورسز نے زبردستی کمرے میں داخل ہو کرسید علی شاہ گیلانی کے جسد خاکی کو بستر سے گرا کر زمین پر گھسیٹا اور ساتھ لے گئے۔ہندوستان کی معروف نیو زویب سائٹ '' دی وائر '' نے انکشاف کیا ہے کہ ہندوستانی فورسز سید علی شاہ گیلانی کے اہل خانہ پہ جسمانی تشدد کرتے ہوئے گیلانی صاحب کے جسد خاکی کو زبردستی اپنے ساتھ لے گئے اور انہیں خود ہی سپرد خاک کر دیا۔
'' دی وائر '' کی رپورٹ میں موقع پر موجود گیلانی صاحب کے اہل خانہ کے حوالے سے بتایا کہ گیلانی صاحب کی وفات کے تھوڑی ہی دیر بعد پولیس افسران اور دیگر فورسز اہلکار منہ پہ ماسک لگائے ان کے گھر آئے اور انہیں رات کے اندھیرے میں ہی فوری طور پر گھر کے قریب ہی تدفین کرنے کو کہا۔ اہل خانہ کے انکار پر وہ چلے گئے۔تھوڑی دیر بعد مزید زیادہ تعداد میں فورسز اہلکار زبر دستی گھر میں داخل ہو گئے اور گیلانی صاحب کے جسد خاکی کو زبر دستی ساتھ لیجانے کی کوشش کرنے لگے۔ اہل خانہ کی مزاحمت پر انہوں نے اہل خانہ پر جسمانی تشدد کیا۔ فورسز اہلکاران نے جسد خاکی کو سٹریچر پر رکھ کر لیجانے کے بجائے میت کو زمین پر گرا کر گھسیٹا اور باہر کھڑی ایمبولنس میں ڈال کر لے گئے۔
پولیس نے گیلانی صاحب کے اہل خانہ کے خلاف میت پہ پاکستانی پرچم ڈالنے اور ہندوستان مخالف نعرے لگائے پر ان کے خلاف مقدمہ درج کیا ہے۔اس وقت گھر میں ڈاکٹر نعیم سمیت گیلانی صاحب کے دو بیٹے، تین بیٹیاں ،بہو اور پوتے موجود تھے۔ڈاکٹر نعیم نے بتایا کہ ہم نے فورسز اہلکاروں کو میت والے کمرے میں داخل ہونے سے روکنے کی کوشش کی لیکن وہ کمرے کا دروازہ توڑ کر اندر داخل ہو گئے۔
https://thewire.in/rights/how-syed-ali-shah-geelanis-body-was-taken-from-his-family-buri
واپس کریں