مقبوضہ کشمیر میں ہندوستانی مظالم ،مزاحمتی تحریک، آزاد کشمیر حکومت اپنی ذمہ داری پہ توجہ دے۔ عزیر احمد غزالی چیئر مین ' پاسبان حریت''
No image مظفر آباد 19ستمبر2021( کشیر رپورٹ)آزاد کشمیر کے دارلحکومت مظفر آباد میں قائم کشمیری حریت پسندوں کی تنظیم '' پاسبان حریت'' کے چیئرمین عزیر احمد غزالی نے کہا ہے کہ حکومت آزاد جموں و کشمیر کو اپنی آئینی ذمہ داریوں کا احساس ہونا چاہیے اور موثر اور ٹھوس منصوبہ بندی کے ذریعے بھارتی مقبوضہ کشمیر کی آزادی کے لیے فیصلہ کن اقدامات کرنے چاہئیں۔اتوار کو ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ حکومت مقبوضہ کشمیر کی آزادی کے لیے فیصلہ کن حکمت عملی مرتب کرے۔
عزیر احمد غزالی نے کہا کہ ہندوستان مقبوضہ کشمیر میں مزاحمتی تحریک کو کچلنے کے لئے انسانی حقوق کی بدترین خلاف ورزیوں کا مرتکب ہو رہا ہے۔ہندوستان نے 5اگست 2019سے مقبوضہ کشمیر میں لاک ڈئون ، فوجی محاصرے کے علاوہ انسانی حقوق کی بڑے پیمانے پر خلاف ورزیوں میں نمایاں اضافہ کیا ہے۔ہندوستانی حکومت نے غیر قانونی طور پر ریاست کی حیثیت ختم کی ، بھارتی شہریوں کو ڈومیسائل جاری کیے اور آئی او کے میں غیر انسانی قوانین اور فوج کے ذریعے دہشت پھیلائی۔ہندوستان نے مقبوضہ کشمیر میں غیر مسلح شہریوں پر جنگ مسلط کی ہے جہاں لوگوں کو وحشیانہ تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے اور شہید کیا جاتا ہے۔ ہزاروں کشمیری شہریوں اور حریت رہنماں کو حراست میں لے لیا گیا ہے اور ان میں سے کئی ابھی تک بھارتی جیلوں میں ہیں۔ہندوستانی حکومت اب کھلے عام مسلم اکثریتی ریاست سے اسلامی نظریے کو ہٹانے اور ہندو ازم کو مسلط کرنے کی مذموم سازشوں پر عمل پیرا ہے۔
چیئرمین'' پاسبان حریت'' نے کہا کہ آزاد کشمیر کی سیاسی جماعتوںکو اس حوالے سے اپنا کردار ادا کرنے کے لئے ایک مربوطط پالیسی بناتے ہوئے متحرک ہونا چاہئے۔ مقبوضہ ریاست کو گزشتہ 769 دنوں سے جیل میں تبدیل کر دیا گیا ہے اور ہم نے آزاد کشمیر سے اپنے کشمیری بھائیوں کے لیے کوئی مضبوط آواز نہیں اٹھائی۔انہوں نے آزاد جموں و کشمیر کے 4.2 ملین لوگوں سے اپیل کی کہ وہ بھارتی ریاستی دہشت گردی اور فوجی جرائم کے خلاف جائز مزاحمتی تحریک میں شامل ہوں۔

واپس کریں