وزیر اعظم عمران خان کے تمام کاموں کا جواب جنرل قمر جاوید باجودہ کو دینا ہو گا،محمد نواز شریف
No image گوجرنوالہ۔ مسلم لیگ(ن) کے قائد محمد نواز شریف نے پاکستان ڈیموکریٹک الائنس کے گوجرانوالہ جلسے سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان کی کرپشن،ر نااہلی اور ملک میں مہنگائی کے طوفان سمیت ملک کو خراب کرنے کے امور کاتذکرہ کرتے ہوئے اس تمام صورتحال کی ذمہ داری جنرل قمر جاوید باجوہ پر عائید کی۔ نواز شریف نے تمام باتوں کا الگ الگ ذکر کرتے ہوئے ہر بات پہ کہا کہ جنرل قمر جاوید باوجدہ صاحب ،اس کا جواب آپ کو دینا ہو گا۔

نواز شریف نےجلسے سے ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کچھ لوگوں کی خواہش ہے کہ میری آواز عوام تک نہ پہنچے اور ان کی آواز مجھ تک نہ پہنچے، لیکن وہ اپنے مذموم مقاصد میں کامیاب نہیں ہوں گے۔انہوں نے کہا کہ آج پاکستان میں لوگوں کے گھروں کے چولہے بجھ چکے ہیں، لوگ بیروزگار ہوگئے ہیں، گیس اور بجلی کے بل ادا کرنا لوگوں کے بس میں نہیں رہا حتی کہ ادویات بھی لوگوں کی پہنچ سے باہر ہوچکی ہیں۔نواز شریف نے کہاکہ موجودہ حکومت نے عوام کو مار دیا ہے، نہ جانے کس بے شرمی سے یہ لوگ میڈیا پر آکر اِدھر ادھر کی کہانیاں سناتے ہیں، یہ کس کا قصور ہے؟ عمران خان نیازی کا یہ انہیں لانے والوں کا؟ اصل قصوروار کون ہے؟ عوام کا ووٹ کس نے چوری کیا، انتخابات میں کس نے دھاندلی کی؟ جو ووٹ آپ نے ڈالا تھا وہ کسی اور کے ڈبے میں کیسے پہنچ گیا؟ رات کے اندھیرے میں آر ٹی ایس کس نے بند کیا؟ نتائج کیوں روکے رکھے گئے؟ اور ہاری ہوئی پی ٹی آئی کو کس نے جتوایا؟ عوام کے ووٹ کی امانت میں کس نے خیانت کی؟ کس نے سلیکٹڈ حکومت بنانے کے لیے ہارس ٹریڈنگ کا بازار دوبارہ کس نے گرم کیا؟
نواز شریف نے کہا کہ اب اصل قصورواروں کو سامنے لانے میں نہیں ڈریں گے، ہم گائے بھینسیں نہیں ہیں، باضمیر لوگ ہیں اور اپنا ضمیر کبھی نہیں بیچیں گے، عوام کو اس کے ساتھ ظلم کرنے والوں کے خلاف سیسہ پلائی دیوار بن کر کھڑا ہونا ہوگا۔انہوں نے سوال کیا کہ کیوں ایک آمر عدالت سے سزا ملنے کے باوجود ملک سے باہر جانے میں کامیاب ہوجاتا ہے کہ جبکہ مجھ سمیت سیاسی رہنماں کو تکالیف دی جاتی ہیں، کیوں منتخب وزرائے اعظم کو پانچ سالہ مدت پوری نہیں کرنے دی جاتی۔سابق وزیر اعظم نے خود پر غداری کے الزام سے متعلق کہا کہ یہ پہلی بار نہیں ہے جب آمروں نے عوامی رہنماں پر یہ الزام لگایا ہے کیونکہ وہ آئین و قانون کی بات کرتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ پھر محب وطن کون ہیں؟ وہ جنہوں نے آئین کو تباہ کیا یا وہ جنہوں نے ملک کو دو ٹکروں میں تقسیم کردیا۔انہوں نے سوال اٹھایا کہ کیوں لیفٹننٹ جنرل ریٹائرڈ عاصم سلیم باجوہ کے خلاف اثاثوں سے متعلق کوئی کیس نہیں بنایا گیا، نیب کو ان کے خلاف الزامات کی تحقیقات کرنی چاہیے، وہ الزامات کے باوجود سی پیک اتھارٹی کے چیئرمین کے طور پر کیسے کام کر سکتے ہیں۔
گوجرنوالہ میں اپوزیشن اتحاد کا جلسہ بھر پور رہا ۔ سٹیڈیم لوگوں سے بھرا ہوا تھا اور اس سے زیادہ افراد سٹیڈیم سے باہر موجود تھے۔
واپس کریں