ہندوستان کو کشمیر میں منہ توڑ جواب دینے کا وقت آ گیا ہے، وزیر اعظم آزاد جموں کشمیر راجہ فاروق حیدر خان
No image مظفر آباد۔وزیر اعظم آزادجموں وکشمیر راجہ محمد فاروق حیدرخان نے سیز فائر لائن ضلع نیلم اور جہلم ویلی کے علاقوں میں بھارتی افواج کی فائرنگ کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ اب تک ہندوستانی فوج کی بلا اشتعال فائرنگ اور گولہ باری سے 5افراد شہید اور28سے زائد زخمی ہو چکے ہیں ۔ حکومت پاکستان اس معاملے کو اقوام متحدہ اور او آئی سی میں فوری طور پر اٹھائے ، کب تک ہندوستانی فوج نہتے سویلینز پر نشانہ باز ی کی مشق کرتی رہے گی اور کشمیری قتل ہوتے رہیں گے ، اب وقت آگیا ہے کہ ہندوستان کو منہ توڑ جواب دیا جائے ۔
وزیر اعظم راجہ فاروق حیدر خان نے کہاکہ افواج پاکستان پر پورا بھروسہ ہے ، حکومت پاکستان سفارتی محاذ پر جارحانہ انداز اختیار کرتے ہوئے فائرنگ کا معاملہ تمام بین الاقوامی فورمز پر اٹھائے ۔ وزیر اعظم نے کہاکہ ہندوستان جنگ کو ہوا دے رہا ہے جس کے نتائج بہت سنگین ہونگے ، ، اقوام متحدہ خاموش تماشائی نہ بنے اپنا عملی کردار ادا کرے ۔ انہوں نے کہاکہ دنیا دیکھ لے کہ کس طرح ہندوستان معصوم شہریوں کی جانوں و املاک کو تباہ کررہا ہے ۔ہندوستان نے اپنی فوج کو کشمیریوں کی نسل کشی کی کھلم کھلا چھوٹ دے رکھی ہے ۔ ایک طرف مقبوضہ کشمیر میں انسانی تاریخ کے بدترین مظالم ڈھائے جارہے ہیں اور دوسری جانب سیز فائر لائن پر آباد شہری مسلسل بھارتی فوج کی اشتعال انگیزی کا نشانہ بن رہے ہیں۔
انہوں نے کہاکہ امن پسند ملک اور انسانی حقوق کی تنظیمیں و ادارے اپنی آنکھیں کھولیں ۔ہندوستان لاکھوں کشمیریوں کا قاتل ہے جو مقبوضہ کشمیر کی سلگتی صورتحال سے دنیا کی توجہ ہٹانے کیلئے خونی لکیر پر معصوم لوگوں کو نشانہ بناتا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ سیز فائر لائن پر بسنے والے آزادکشمیر کے شہری پہلی دفاعی لائن ہیں وہ افواج پاکستان کے ساتھ ملکر ہندوستانی عزائم ناکام بنائیں گے ۔ وزیراعظم نے ہدایت کی کہ انتظامیہ فوری طور پر زخمیوں کو ہسپتال منتقل کرے اور شہریوں کو محفوظ مقام پر منتقل کیا جائے۔ انہوں نے کہاکہ جن زخمیوں کی حالت تشویشناک ہے انہیں مظفرآباد منتقل کیا جائے ۔
واپس کریں