ہندوستان کی طرف سے آزاد کشمیر اور گلگت بلتستان میں دہشت گردی کی کوششیں تیز
No image راولپنڈی ( کشیر رپورٹ) ہندوستانی انٹیلی جنس ایجنسیاں بلوچستان اور صوبہ خیبر پختون خواہ میں دہشت گردی کرانے کے ساتھ ساتھ آزاد کشمیر اور گلگت بلتستان میں بھی دہشت گردی کی وارداتیں کرانے میں بھی ملوث ہیں۔13نومبر کو وزیر خارجہ کے ساتھ مشترکہ پریس کانفرنس میں ڈی جی 'آئی ایس پی آر' کے پاکستان کے خلاف دہشت گرد گروپوں کی مالی اور اسلحے و گولہ بارود کی فراہمی کے بارے میں مضبوط شواہد پیش کئے جو عالمی سطح پر بھی پاکستان کی طرف سے پیش کئے جا رہے ہیں۔ اس موقع پر ڈی جی ' آئی ایس پی آر' نے آزاد جموں وکشمیر اور گلگت بلتستان میں بھی ہندوستانی انٹیلی جنس ایجنسیوں کی طرف سے دہشت گردی کی تفصیلات سے آ گاہ کیا گیا۔
انہوں نے بتایا کہ انڈیا کی انٹیلی جنس ایجنسیوں نے اپنے ایجنٹوں کے ذریعے گزشتہ چار سال میں آزاد جموں وکشمیر ،گلگت بلتستان میں بم دھماکے کرانے کے لئے 60بم نصب کرائے جن میں سے 22کو ناکارہ کر دیا گیا جبکہ 38بم دھماکوں میں 13 سویلین اور46 فوجی اس کا نشانہ بنے۔
آزاد جموں و کشمیر اور گلگت بلتستان میں ہندوستانی انٹیلی جنس ایجنسی' را' کی طرف سے دہشت گردی کی وار داتوں اور کوششوں کا ذکر کرتے ہوئے ڈی جی ' آئی ایس پی آر' نے بتایا کہ ہندوستان آزاد جموں وکشمیر اور گلگت بلتستان میں حالات خراب کرنے کی بھر پور کوشش کر رہا ہے،مضبوط شواہد کے مطابق ' را' ملوث ہے آزا د کشمیر میںآئی ای ڈیز کے ذریعے سویلین اور فوج کے افراد کے خلاف استعمال کرنے میں۔جنوری 2016 سے60 آئی ای ڈیز نصب کی گئیں جن میں سے 38 دھماکے ہوئے جن میں 13سویلین اور46 فوجی اس کا نشانہ بنے،22 آئی ای ڈیز کو ناکارہ بنایا گیا۔
جنوری2019 سے ایڈین انٹیلی جنس ہینڈلر کوڈنیم کرنل پنڈت اور کرنل معاذ نے 9 آئی ای ڈیز لائین آف کنٹرول پر گڑبڑ کے لئے بھجوائیں،یہ تمام مواد بھارتی ساختہ ہے،انڈین انٹیلی جنس ایجنسی نے بم دھماکے کی تیاری کے لئے وڈیوز بھی فراہم کیں،پریس کانفرنس میں ایک ایسی وڈیو بھی دکھائی گئی جس میں بھارتی ایجنسی کا آدمی ریموڈکنٹرول بم دھماکے کے بارے میں اپنے ایجنٹ کو بتا رہا تھا۔انڈین انٹیلی جنس ایجنسیز کی طرف سے نو وائس پیغامات میںسے ایک میں انڈین افسر بم مظفر آباد آزاد کشمیر میںبم دھماکہ کرنے کے لئے دھماکے کے طریقے کے بارے میں اپنے ایجنٹ کو ہدایت دے رہا تھا۔انڈین ایجنسیاں آزاد کشمیر اور گلگت بلتستان میں دہشت گردی کرانے کے لئے کروڑوں روپے فراہم کر چکی ہیں۔انہوں نے یہ بھی بتایا کہ نومبر2020کے بعد ہندوستان کی طرف سے اپنے ایجنٹوں کے ذریعے آزاد کشمیر اور گلگت بلتستان میں دہشت گرد کاروائیاں تیز کئے جانے کی خطرات ہیں۔

واپس کریں