وزیر اعظم عمران خان کا ہندوستان کی مودی حکومت کی طرح اپنے خلاف تحریک کو غیر ملکی سازش قرار دینا !کشیر رپورٹ
No image اسلام آباد (کشیر رپورٹ) ہندوستان کی ہندو انتہا پسند مودی حکومت کی طرف سے اپوزیشن اور کسانوں کی احتجاجی تحریک کو غیر ملکی سازش قرار دینے کے الزام کی طرح وزیر اعظم عمران خان نے بھی اپوزیشن تحریک کے پیچھے غیر ملکی ہاتھ ہونے کا الزام لگا دیا ہے۔

اپوزیشن اتحاد کی دن بدن تیز سے تیز تر ہوتی تحریک کی وجہ سے شدید پریشانی اور غیر یقینی سے دوچار ' پی ٹی آئی' حکومت کے وزیر اعظم عمران خان نے اپوزیشن تحریک کے پیچھے غیر ملکی ہاتھ کا الزام لگا دیا ہے۔وزیراعظم عمران خان نے گزشتہ روز چند صحافیوں سے گفتگو میں اپوزیشن کے اسمبلیوں سے ممکنہ استعفوں کی دھمکی پر کہا کہ میں اپوزیشن سے زیادہ پر اعتماد ہوں، پی ڈی ایم نے استعفے دیے تو الیکشن کرادوں گا، ہمیں پتہ ہے مشکل وقت ہے لیکن جانتاہوں جیت میری ہوگی، اپوزیشن تحریک کے پیچھے غیرملکی ہاتھ ہوسکتاہے جس کی وجہ سے ان کو اعتماد مل رہاہے، اس سب کے پیچھے ایک پلان ہے، لیبیااورعراق میں بھی یہی ہواتھا جو ہمارے یہاں ہورہاہے ۔

ہندوستان کی ' بی جے پی' حکومت کی طرف سے باقاعدہ ایک مہم چلاتے ہوئے کہا جا رہا ہے کہ ہندوستان مخالف قوتیں کسانوں کے احتجاج کے ذریعے ایک بہت بڑی سازش کر رہی ہیں۔ تباہ حال کسانوں کے بے خوف مظاہروں اور دہلی کی طرف مارچ سے شدید پریشانی مودی حکومت مودی حکومت کسانوں کے مطالبات کو تسلیم کرنے کے بجائے کسانوں اور ان کی حمایت کرنے والوں کو ہندوستان مخالف قرار دینے کی اپنی روائیتی پالیسی اختیار کئے نظر آ رہی ہے۔

اب وزیر اعظم عمران خان نے بھی ملک کی 11اپوزیشن جماعتوں کے اتحاد '' پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ'' کی حکومت کے خلاف تحریک کے پیچھے غیر ملکی ہاتھ ہونے کا الزام لگاتے ہوئے ہندوستان کی مودی حکومت کی طرح کا ایسا سیاسی حربہ استعمال کیا ہے جس سے ان کی کمزور پوزیشن ہزیمت سے دوچار ہو سکتی ہے ۔ملک کی اپوزیشن جماعتوں کے تحریک کو غیر ملکی سازش قرار دینے کی انتہا پسندی پر مبنی اس بیانئے سے ظاہر ہوتا ہے کہ وزیر اعظم عمران خان اپوزیشن تحریک کی وجہ سے خو د کو کمزور اور غیر یقینی صورتحال سے دوچار محسوس کر رہے ہیں اور اپنی حکومت بچانے کے لئے ایسے انتہائی اقدامات بھی اٹھا سکتے ہیں جنہیں کسی طور پر ملک و عوام کے مفاد میں قرار نہیں دیا جا سکتا۔

واپس کریں