جنگلاتی علاقوں میں رہائش پذیر کشمیریوں کو بے دخل کرنا سنگین زیادتی ہے، چیئرمیں سول سوسائٹی عبدالقیوم وانی
No image سرینگر۔مقبوضہ جموں وکشمیر میں جموںوکشمیر سول سوسائٹی فورم نے جنگلاتی علاقوں میں رہائش پذیر کشمیریوں کو قابض انتظامیہ کی طرف سے بے دخل کرنے کی کارروائیوں پر سخت تشویش کا اظہار کیا ہے۔ جموں کشمیر سول سوسائٹی فوم کے چیئرمین عبدالقیوم وانی نے سرینگر سے جاری ایک بیان میں قابض انتظامیہ پر زور دیا کہ کہ وہ مقبوضہ علاقے کی زمینوں، پانی اور جنگلات کے مستقبل کے بارے میں کسی فیصلے سے پہلے علاقے کے لوگو ں کو اعتماد میں لے ۔ انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کے قدرتی وسائل پر کشمیریوں کا حق ہے۔ انہوں نے جنگلاتی علاقوں میں رہنے والوں کو بے دخلی کے نوٹسسز جاری کرنے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس اقدام سے یہ لوگ سخت عدم تحفظ کا شکار ہو گئے ہیں۔ عبدالقیوم وانی نے وسطی ضلع بڈگام کے دیہاتیوں کی حالت زار پر بھی تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ محکمہ جنگلات کی طرف سے انہیں بے دخلی کے نوٹس جاری ہونے سے یہ لوگ اپنے گھروں سے محروم ہونے کے خوف کا شکار ہو چکے ہیں۔ انہوںنے کہا کہ ضلع بڈگام میں جن دیہات کے رہنے والوں کو نوٹس جاری کیے گئے ہیں ان میں کینڈاجان، بٹی وڈار، جب آباد، برنوار، ناگیل ، یوسمرگ اور دروان شامل ہیں۔عبدالقیوم وانی نے مزید کہا کہ قابض انتظامیہ نےگائوں والوں کے سیب کے سینکڑوں درخت کاٹ دیے ہیں اور مٹی کی جھونپڑیاں زمین بوس کی ہیں۔ انہوںنے کہا کہ یہ لوگ صدیوں سے جنگلاتی زمینوں پر رہ رہے ہیں اور اب انہیں یہاں سے بے دخل کرنا سنگین زیادتی ہے۔
واپس کریں