امریکہ انسانی حقوق کے تحفظ کے لئے کشمیریوں کی امید ہے، صدر آزاد کشمیر سردار مسعود خان
No image مظفرآباد۔آزاد جموں و کشمیر کے صدر سردار مسعود خان نے امریکہ میں مقیم پاکستانیوں اور کشمیریوں کو تنازعہ کشمیر امریکی عوام کے سامنے موثر انداز میں پیش کرنے پر مبارکباد پیش کرتے ہوئے اس توقع کا اظہار کیا کہ پاکستانی امریکن کمیونٹی امریکہ جیسے اہم ملک میں پاکستان کا امیج بلند کرنے اور کشمیریوں کے حق خود ارادیت کی تحریک کے لیے حمایت حاصل کرنے میں اہم کردار ادا کرے گی۔ یہ بات انہوں نے امریکن پاکستانی ایڈووکیسی گروپ کے صدر علی راشد سے ملاقات کے دوران کہی جنہوں نے بدھ کے روز ایوان صدر مظفرآباد میں ان سے ملاقات کی اور انہیں امریکہ میں کشمیری اور پاکستانی کمیونٹی کی کشمیر کے حوالے سے سرگرمیوں سے تفصیلی طور پر آگاہ کیا۔ صدر آزاد کشمیر نے نیویارک کی پاکستانی کمیونٹی کا حاصل طور پر اپنی اور آزاد جموں و کشمیر کے عوام کی طرف سے شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ نیو یارک کی کمیونٹی کی کوششوں سے وہاں کی سٹیٹ اسمبلی میں اس سال کے اوائل میں ایک قراردار منظور کر کے ہر سال 5 فروری کو کشمیر ڈے منانے کا جو اعلان کیا وہ کمیونٹی کے موثر کردار کا واضح ثبوت ہے۔ صدر آزاد کشمیر نے امریکہ میں مقیم پاکستانیوں اور کشمیریوں کو ایک متحرک قوت قرار دیتے ہوئے کہا کہ انہیں یہ جان کر نہایت اطمینان ہوا کے ہماری کمیونٹی نہ صرف عوامی سطح پر بلکہ امریکی کانگریس، امریکی سینٹ اور مختلف ریاستوں کی حکومتوں اور اسمبلیوں کے ساتھ مل کر کشمیر کاز کو آگے بڑھا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ امریکہ انسانی حقوق کے تحفظ کے حوالے سے دنیا میں خاص طور پر ان خطوں کے عوام کے لیے امید کی ایک کرن ہے جن کے حقوق طاقتور حکومتوں اور قابض ملکوں نے غصب کر رکھے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ انہیں قوی امید ہے کہ امریکن پاکستانی ایڈووکیسی گروپ اپنی سرگرمیوں کو امریکی معاشرے کے تمام طبقات تک وسعت دے کر انصاف پر مبنی کشمیریوں کی جدوجہد آزادی اور حق خود ارادیت کے مطالبہ کو اجاگر کرے گا اور اس سلسلے میں وہ اس گروپ کو ہر قسم کا تعاون فراہم کریں گے۔ اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے امریکن پاکستانی ایڈووکیسی گروپ کے صدر علی راشد نے کہا کہ امریکہ اور امریکی عوام اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ تمام انسان بلا امتیاز رنگ ، نسل، مذہب اور جنس برابر ہیں اور انہیں زندگی گزارنے ، آزادی کے ساتھ رہنے اور خوشی حاصل کرنے کے لیے جستجو کرنے کا غیر متزلزل حق حاصل ہے جبکہ مقبوضہ جموں وکشمیر کی موجودہ صورت حال ان نظریات و خیالات کی مکمل نفی کرتی ہے۔ یہ بات ہم امریکی شہریوں کو بڑی محنت سے سمجھا رہے ہیں اور ہماری یہ کوششیں نتیجہ خیز ثابت ہو رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ان کی تنظیم کشمیریوں کے خوبصورت کلچر، ثقافتی ورثہ اور ان کے نسلی پس منظر کو امریکی عوام کے سامنے پیش کر کے کشمیریوں کے انسانی حقوق کے تحفظ کے لیے حمایت حاصل کر رہے ہیں۔ علی راشد نے مزید بتایا کہ ان کی تنظیم صدر جوبائیڈن کی قیادت میں قائم نئے امریکی انتظامیہ سے مل کر جنوبی ایشیا میں امن و سلامتی کو یقینی بنانے کے لیے تنازعہ کشمیر کو پر امن سیاسی و سفارتی ذرائع سے حل کرنے کی ضرورت پر زور دیتی رہے گی اور اس مقصد کے لیے امریکی کانگریس، سینٹ کے ارکان، میڈیا اور سول سوسائٹی تک رسائی حاصل کر کے انہیں مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی صورت حال اور دو ایٹمی ملکوں کے درمیان غیر حل شدہ تنازعہ کشمیر سے پیدا ہونے والے خطرات سے آگاہ کرتی رہے گی۔

واپس کریں