امریکی صدر جو بائیڈن اور مسئلہ کشمیر،'' بی بی سی رپورٹ''
No image لندن( کشیر رپورٹ) برطانیہ کے سرکاری اطلاعاتی ادارے' بی بی سی' نے امریکہ کے نئے صدر جوبائیڈن کی خارجہ پالیسی کے حوالے سے اپنی ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ ''امریکہ کی ماضی کی حکومتیں انڈیا کے ساتھ تعلقات بہتر کرتی آئی ہیں لیکن اس کے باوجود جو بائیڈن اور ان کی نائب صدر کملا ہیریس نے کشمیر میں انسانی حقوق پر مذمتی بیانات جاری کیے تھے۔ سوال یہ ہے کہ اب اقتدار میں آنے کے بعد ان کے بیانات کس قسم کی عملی صورت اختیار کرتے ہیں''۔' بی بی سی' کا کہنا ہے کہ ''افغانستان سے امریکی افواج کا مکمل انخلا ہوتا ہے یا وہ افغان طالبان سے مذاکرات کے انجام تک اس بارے میں کوئی فیصلہ کرتے ہیں، جس کے لیے انھیں پاکستان کی ضرورت ہو گی۔ دیکھنا یہ ہے کہ آیا وہ ان معاملات میں صدر ٹرمپ کے نقشہِ راہ پر چلیں گے یا ان کا اپنا کوئی نیا وژن ان کی حکومت کی پالیسیوں کی رہنمائی کرے گا''۔ واضح رہے کہ صدر جوبائیڈن نے نئی امریکی انتظامیہ میں ہندوستانی مقبوضہ کشمیر سے تعلق رکھنے والی دو خواتین کو بھی شامل کیا ہے۔

واپس کریں